وہي ہے بندئہ حر جس کي ضرب ہے کاري

نہ وہ کہ حرب ہے جس کي تمام عياري

ازل سے فطرت احرار ميں ہيں دوش بدوش

قلندري و قبا پوشي و کلہ داري

زمانہ لے کے جسے آفتاب کرتا ہے

انھي کي خاک ميں پوشيدہ ہے وہ چنگاري

وجود انھي کا طواف بتاں سے ہے آزاد

يہ تيرے مومن و کافر ، تمام زناري!

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here