مسلم سے ايک روز يہ اقبال نے کہا

ديوان جزو و کل ميں ہے تيرا وجود فرد

تيرے سرود رفتہ کے نغمے علوم نو

تہذيب تيرے قافلہ ہائے کہن کي گرد

پتھر ہے اس کے واسطے موج نسيم بھي

نازک بہت ہے آئنہ آبروئے مرد

مردان کار، ڈھونڈ کے اسباب حادثات

کرتے ہيں چارئہ ستم چرخ لاجورد

پوچھ ان سے جو چمن کے ہيں ديرنيہ رازدار

کيونکر ہوئي خزاں ترے گلشن سے ہم نبرد

مسلم مرے کلام سے بے تاب ہوگيا

غماز ہوگئي غم پنہاں کي آہ سرد

کہنے لگا کہ ديکھ تو کيفيت خزاں

اوراق ہو گئے شجر زندگي کے زرد

خاموش ہو گئے چمنستاں کے رازدار

سرمايہ گداز تھي جن کي نوائے درد

شبلي کو رو رہے تھے ابھي اہل گلستاں

حالي بھي ہوگيا سوئے فردوس رہ نورد

”اکنوں کرا دماغ کہ پرسد زباغباں

بلبل چہ گفت و گل چہ شنيد و صبا چہ کرد”

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here